کوئٹہ میں دو نومولود جڑواں بہن بھائی کی پراسرار موت، ایک کی گردن کاٹی گئی ہے، والدین کا الزام

کوئٹہ: ڈیجیٹل نیوز اردو(ویب ڈیسک)
کوئٹہ میں دو نومولود جڑواں بہن بھائی کی پراسرار موت ہوئی ہے۔ والدین نے الزام لگایا ہے کہ نجی نگہداشت نرسری کے انکی بیوٹر میں رکھے بچوں کے موت کا ذمہ دار نجی ہسپتال عملہ ہے ایک بچے کی گردن بھی کٹی ہوئی ہے، نگہداشت نرسری انتظامیہ نے الزام مسترد کردیا پولیس نے تفتیش شروع کردی
تفصیلات کے مطابق حاجی حفیظ نامی شہری کے 6 دن کے جڑواں بچوں کو گزشتہ روز ہسپتال منتقل کیا گیا۔ والدین کا کہنا ہے کہ ڈاکٹرز نے انکی بیوٹر میں رکھنے کی ہدایت کی جس پر دونوں بچوں کو جناح روڈ پر واقعے نجی نگہداشت نرسری کے انکی بیوٹر (شیشے) میں رکھوایا گیا۔ ہفتے کی شام نرسری سے ایک بچے کے انتقال سے متعلق فون کرکے آگاہ کیا گیا ہسپتال پہنچنے پر بتایا گیا کہ دوسرے بچے کا بھی انتقال ہوگیا ہے، بچوں کی لاشیں گھر لے جائی گئیں تو غسل دیتے وقت دیکھا کہ ایک بچے کی گردن کٹی ہوئی ہے، بچوں کے ورثا لاشیں لیکر نجی نگہداشت نرسری پہنچ گئے اور الزام لگایا کہ بچوں کے موت کا ذمہ دار نجی ہسپتال عملہ ہے، دوسری جانب ہسپتال انتظامیہ نے ورثا کے الزام کومسترد کردیا ہے اور دعوی کیا ہے کہ بچوں کی موت طبی ہے انتظامیہ کے مطابق بچے جب ان کے پاس لائے گئے تو ان کی حالت تشویشناک تھی۔ میڈیکلی اس قسم کے کیسز میں موت کے بعد پری میچور بچوں کا جلد کھچاو پڑنے سے کٹ جاتا ہے۔ پولیس کا کہنا ہے کہ بچوں کی لاشوں کو پوسٹ مارٹم کیلئے سول ہسپتال منتقل کردیا گیا ہے۔ بچوں کی موت طبی ہے. یا معاملہ کچھ اور پوسٹ مارٹم رپورٹ کے بعد صورتحال واضح ہوگی، واقعے کی تفتیش شروع کردی ہے

کیٹاگری میں : صحت

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں