0

کوئٹہ: سریاب کے سرکاری اسکول کی طالبات کا احتجاج، قومی شاہراہ بلاک کردی

ڈیجیٹل نیوز اردو( ویب رپورٹر)
ہمیں ٹیچر چاہیئے ہمیں ٹیچر چاہیئے۔ بلوچستان کے دارالحکومت میں گورنمنٹ گرلز مڈل اسکول لہڑی آباد میں اساتذہ کی عدم تعیناتی پر طالبات سراپا احتجاج بن گئی، طالبات نے علاقہ مکینوں کے ہمراہ گاہی خان چوک پر احتجاج کرکے ٹیچر دو ٹیچر دو، ہمیں ٹیچر چاہیئے، کے بلند و بانگ نعرے لگائے
تفصیلات کے مطابق ہفتہ کی صبح سریاب کے علاقے گوہر آباد میں گورنمنٹ گرلز مڈل اسکول لہڑی آباد کی طالبات اور علاقہ مکینوں نے سریاب کے مصروف علاقے گاہی خان چوک پر احتجاج کیا ٹائر جلاکر سڑک بلاک کردی۔ طالبات نے پلے کارڈز اٹھا رکھے تھے جن پر اسکول میں اساتذہ کی تعیناتی سے متعلق نعرے درج تھے۔ اسکول کی طالبات ٹیچر دو ٹیچر دو اور ہمیں ٹیچر چاہیئے کے نعرے مسلسل لگاتی رہیں۔ مظاہرین کا کہنا تھا کہ دو ماہ سے اسکول میں صرف ایک ٹیچر ہے۔ جس سے اسکول میں پڑھائی نہیں ہورہی طالبات سارا دن بیٹھی رہتی ہیں یا اسکول سے باہر کھیل رہی ہوتی ہیں طالبات کا کہنا تھا اسکول میں پہلے پانچ ٹیچز تھیں بیک وقت دو کلاسز کو سنبھالنے کی وجہ سے چار اساتذہ نے اپنا ٹرانسفر کرادیا اب دو ماہ ہوگئے اسکول میں نئی ٹیچرز تعینات نہیں کئے گئے ، طالبات نے مطالبہ کیا کہ ان کے اسکول میں مڈل اسکول کی ضرورت کے مطابق اساتذہ تعینات کئے جائیں تاکہ انہیں معیاری تعلیم ملے اور ان کا سال ضائع نہ ہو۔
طالبات کے احتجاج اور نعرہ بازی کے مناظر دیکھئے اس رپورٹ میں

ڈیڑھ گھنٹے احتجاج کے بعد طالبات پرامن طور پر منتشر ہوکر اسکول پہنچیں اور پھر اسکول کے اندر بھی بھرپور نعرہ بازی کرتے ہوئے احتجاج کیا۔ بعد ازاں محکمہ تعلیم کے حکام نے اسکول پہنچ کر اساتذہ کی تعیناتی کی یقین دہانی کرائی جس پر طالبات نے احتجاج ختم کردیا

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں